Fozia ki Chudai (Urdu)










Baby Aunty ki Chudai

Baby Aunty ki Chudai
Main aaj aap se apni sachhi kahani share kar raha hun. Mayra nam Kamran hai or Main Karachi main rehta hun. Mujh ko sex bohut pasand hai.

Abhi may 32 sal ka hun. Ye kahani us time ki hai Jab mein 18 sal ka tha. Us waqt hamare brabar walay flat me baby aunty rehti thi. Unki umar lagbhag 30 sal thi. Woh dikhne may bohut sexy lagti thi specially us ki gand bohut sexy thi jab wo chalti thi to us ki gand dance karti thi. Uski gand etni ubhari hui hai ke jab woh chalati thi to flat k sabhi mard kisi  na kisi bahane se us ko dekhtay thay.  Aunty ka husband sales or marketing ka kam karta tha or is wajha se wo month may 3-4 bar Karachi se bahar jata tha. Us ki 1 beti bhe thi.  Beta koi na tha is wajha se us ki sas aksar us ko deyti rehti thi.

Ye kahani un dino ki hai jab baby ki sas gaon gayi hui thi aur us k husband ko bhe kam k silsilay may out of city jana pardh gaya tha. Wo 2 din k leye karachi se bahar gaya tha or jatay howay mujh ko keh gaya tha k is doran us k ghar ka kheyal rakhun or may ne kaha tha k koi bhe kam ho to may hazir hun. Us din main apane college se ghar aa raha tha k baby aunty ne mujhe apani gallery se awaz di aur apane ghar bulaya. Jab main ghar ke paas gaya to darwaze par khadi thi.

‘Kya huwa aunty’ maine pucha.

‘Jara dhoodh la ke de do gay?’ aunty ne kaha.

‘Ji zaroor ’

Unho ne muhe paise diye aur main se chal diya. Maine wapas aya to dekha k darwaza khula howa hai. main ghar k andar chala gaya. Aunty kitchen mein thi. Maine awaz di to usho ne mujhe kitchen main bulaya. Jab main andar gaya to dekha k wo kuch paka rahi hain unho ne kafi bareek kapray pehen rakhay thay or is time wo dupattay may bhe nahi thin jis ki wajha se un ka cena bohut Sexy lag raha tha.  May dodh denay k leye un ka kareeb howa to mayra dil zor zor se dharaknay laga or mayra dil Mere dil men aya abhi un se lipat jawun. May un ko ghor se dekh raha tha. Acanak baby aunty palti to main ne apni nazrain nechi kar len. Mujh ko laga k unho ne mayri chori pakar le ho. Un ko mere upar thoda shak hua.

‘Kya hwa itnay ghabra kyun rahay ho’ baby aunty ne mujh ko ghor se dekhtay howay pucha.

‘Nahi kuch nahi kutch soch raha tha’ may ne ghabra k jawa deya

‘Tum chay piyo gay’ maine ha may sir hila deya or bahar sofe pe baith gaya thodi dar main aunty chay bana ke layi. Chay petay howay may ne unki ladki ke bare men poocha to usho ne kaha k wo school gayi hoi hai.

batain kartay howay achanak baby aunty ne muskurate huwe pucha ‘Mujhe ek baat bataogay such batana main kisi ko nahi batawun gi’

‘Ha… Main…….main kuch samajha nahi?’may ne pareshan ho k pocha.

‘mene us din bus stop pe tum to ek ladki ke saath dekha that, kon thi wo’

‘kab?’ main ne unjan bantay howay pocha.

‘Daro mat sach bataon woh tumhari girl friend thi na? ’aunty ne hanste huwe kaha.

‘Ha magar ghar pe mat batana’ may ne un se reqeust ki.

‘nahi main bhala kyon batawoo?

Chay pe k may ne jany ki ijazat mangi to kehnay lagi ‘kya koi kam hai, thodi dar or baith jao’

Phir aunty ne yaha waha ki baaten char den. Hum dono baaton mein gul mil gaye to may ne kaha k ‘ayk baat to batain aap ki apni sas se nahi banti kya?  Mayra sawal sun k wo khamosh ho gain phir kehnay lagin k unki sas chahtin hain k un k yahan pota ho or wo is leye he naraz hain k aunty ka koi ladka nahi hai.

‘Aap se ek baat puchu?’ maine baat agau barhatay howay kaha.

‘Ha poocho’

‘Kya uncle bhe aap se Khush nahi hai?’

‘Nahi aisi koi baat nahi lekin ?’ wo chup ho gai

‘Kya huwa aunty bolo na’ may ne pocha

‘Baat ye hai ki tere uncle mere taraf dehan nahi dete’ ab aunty khulke baat kar rahi thi. main samaj raha tha k mera kuch kaam ban raha hai.

‘Matlab?’

‘Woh ladke ke liye kutch koshish nahi karte, her time busy rehtay hain’ unho ne kuch ghamgeen hotay howay kaha.

May ne unki ankhon may ankhain dal k gheri nazar se dekha or pocha

‘main kuch madat kar sakta hun kya?’aunty mayri ye baat sun k satpata gai or ayk dam khamosh se ho gai or mujh ko ghehri nazrun se dekhnay lagi.  May samjha k us ko bura lag gaya hai. Is leye baat banatay howay kehnay laga k may to aap se aysay he keh raha tha.

‘Aunty muje pata hai ke aap ki or uncle ki nahi banti. Kai bar maine aap dono ko lartay hue dekha hai’aur phir maine unka haath pakar liya.

Aunty es waqt kuch nahi boli aur na he haath chudaya. bus mere taraf pith kar k khadi ho gayi to may bhe un k peechay  khara ho gaya or wo thora agay janay lagi to may ne peechay se un ki kamar ki tarf se haath dal k ahista se un ko pechay se pakar leya.  Us time mayra lund bhe khara ho gaya tha or jab may ne un ko pakra to lund un ki gaand ko touch karnay laga.

‘ssssss aha kya kar rahe ho ye?’ unho ne thora pechay hatty howay kaha.
May ne un ko nahi chora or un ko pechay se zara zor se pakar leya unho ne bhe khud ko churanay ki koi khas koshish nahi ki. Is doran mayra haath un k cene pay tha or may un k sath back se chipka huwa tha.  Thori dar is tanrah he guzar gaya may samajh gaya k ye sub kuch aunty ko acha lag raha hai to mayri himat or bardh gai.

Inay may aunty palat gayi to may ne un se agay se lipat gaya. Or un ki garden pe kiss karnay laga.  Unho ne bhe response deya or mujh ko zor se daba laya

Main ne apne hont un k honto pe laga diye.  To aunty ko bhe josh a gaya or wo bhe mujh ko kiss karnay lagi. May ne un k honto ko chusna start kar deya.  Aunty ne ankhain band kar lain or lambay lambay sans laynay lagin. Is tanrah 2, 3 minute guzar gaye un ki kissing kartay kartay may apnay haath un ki back pe lay gaya or un ki gaand ko sehlanay laga.

Aunty bhe ab garam ho chuki thi us se mayra haath pakar ka apnay cenay pe rakh leya. Cene pe haath lagatay he may khowabo ki dunia may pohanch gaya. Un ka breast bohut sexy or soft that may to jaisay pagal he ho gaya or zor zor se kapro k upar se he boobs ko kiss karnay laga. 

Achanak aunty ne bed room ki taraf ishara kartay howay under chalnay ko kaha.  May un se chipka chipka bed room may a gay. Wo bed pe bath gai or may phir start ho gaya.

May un k honto ko kiss kar raha tha phir may ne apnay haath se un ki balls ko dabanay laga to wo or hot ho gai. Or kameez k upar se he un ko dabanay laga or cene pe kissing karnay laga. Phir may ne un ki kameez pait se thora upar ki or pait pe kissing karnay laga wahan se hota hwa may or opar chala gaya or phir un k dodh tak a pohanch gaya to unho ne apni kameez or upar kar de or thori dair may cene pe kiss karta raha unho ne under breazer bhe nahi pehna howa tha. Phir may ne un ki kameez utar de.

Un ka gora gora or sexy cena mayray samnay tha, may bata nahi sakta us k cena kitna sexy or tight that. may ne pehli par kisi larki ko under se dekha tha is leye may to us ko dekh k pagal sa ho gaya or nipple monh may lay ka zor zor se chosnay laga. May bata nahi sakta is time mujh ko kitna maza a raha tha.  Mayra ye bay sabra pun dekh k aunty muskura k boli itni bhi kya besabri aram se chooso may kahan bhag to nahi rahi hun.

May aunty k breast ko chosnay may busy tha k may ne mehsoos kya k un ka haath mayray lund pe hai phir unho ne lund ko zor se daba leye or us ko sehlanay lagi. Is doran may ne apni kameez bhe utar de thi or wo bhe mayray chest pe kiss kar rahi thi.

Phir aunty ne meri zip khol di aur niche ghutno pe baith ke meray land ko bahar nikal leya.  Mayra lund dekh k aunty khosh ho gai or kehnay lagi may to tum ko bacha samajhti thi tumhara lund to bohut sexy hai or phir lund ko monh may lay k chosne lag gayi. Mere muh se siskare nikal gai. Or may ne apni paint bhe utar de ab may pora nanga tha.

‘Kitne dino baad aisa shandar lund dekha hai″ aunty lund ko chostay howay masti bharay awaz may boli.

‘Chose lo aunty pehli bar ise koi choose raha hai’.  Aunty ne pura lund apne muh men bhar liya aur jor se chusne lagi.

‘Aunty mera pani nikalne wala hai’

‘Chor de muh main’ ye keh k wo or zor se chusne lagi. Maine haatho se unke bal pakad liye aur lund andar dhakel ke paani chor diya.

‘Tumhra lund to bohut teasty hai itna to tumharay un uncle ka land bhe nahi hai.’aunty ne khade hote huwe kaha aur apne saare kapade utar diye. muze haath pakad kar apnay se kareeb kar leya

‘ab tumhari bari aaj meri pyas buja do’ye keh k aunty bed pe late gayi aur apne dono pair phela deye un ki choot mayray samnay thi, aunty ka rung gora tha un ki choot bhe pink thi us ko dekh k mayray monh may pani a gaya or may aunty ki chut ko haath se sehlane laga. Or phir choot pe apna monh rakh k us ko chosnay laga. May bata nahi sakta mujh ko kitna maza a raha tha, aunty ki choot bohut soft or chikni thi or na janay kab se piyasi thi. phir may ne apni Ek ugli choot k sorak may dal de or us ko under bahar karane laga.

Aunty ki chut bohut HOT ho rahi thi. Maine apni zaban ko puri tanrah andar dal ke ghumane laga. Ek hath se may breast ko dabane laga. Aunty bechain ho rahi thi phir us ne apni position change ki or wo mayri tango ki taraf monh kar k late gai or mayra lund apnay monh may lay leya. May ne bhe aunty ki choot ko zor zor se chatne laga. Aunty Jharnay k kareeb ayi. Mere sar ko chut ke upar daba diya aur pani chor diya. mere muh men garam lava ane laga tha.

‘ab tum uper aa jao’aunty ne mera lund choose ke tayar kar diya tha. Maine apna lund unki cht par rakh diya. Or under dalnay laga to wo boli.

‘Ahista dalo kafi din huye hai ise chode huye’ may ne halkay sa dhakka lagaya. Chut gili thi jis ke wajah se mayra lund under janay laga. May  lund ko slow slow under bahar karnay laga us ki chood bohut tang thi lagta tha k us may kabhe lund gaya he nahi ho.  Jab thori jaga ban gai to may ne zor se dhaka deya or pura lund undar dal diya. Aunty ne takleef se ankhain band kar le thin.

‘aram se chod te rehna sssssss ahaaaaaaaaa dal de chod de’ aunty pori tarhan se tarap uthi thi main bhi charge ho gaya. Thori dar may us ka dard kam honay laga to may zor zor se jatkay deynay laga.

‘Aunt maza aa raha hai har din tumari gaand dekh ke muth marta tha. Aaj tume chod raha hun.’

‘chod de pori bharas nikal de ji‘ aunty ne dard may dobi hoi awaz may kaha.

‘ha anty.’

‘Bol mere raja ab tere liye main aunty nahi rahi.  Bahut maza aa raha hai’
Mayri speed or tez ho gai or aunty phir ab mayra saath de rahi thi wo bhe hil rahi thi or phir wo mujh se zor se lipat gai wo jharnay wali thi, choot ne pani chora to lund chikna ho gaya or may or josh se under bahar karnay laga, 5 minute tak under bahar karta raha or phir mayra pani phe nikal gaya.  May thak k aunty k upar he late gaya.

May aunty k upar layta raha phir un k brabar late gaya or ayk bar phir un k nipple monh may lay k chosnay lagas. Hum log 10 minute tak is tanrah he masti kartay rahay is doran mayra lund phir khara ho gaya.

Aunty ne mayra lund haath may laytay howay kaha “Tumhara sheer to phir jaag gaya hai”

Aunty uthnay lagi to may ne us ko pechay se pakar leya “kahan ja rahi ho abhe ruko to”

Ye kehtay howay may aunty se back ki taraf se lipat gaya, mayra lund aunty ki gand se chipka howa tha. May aunty ko pakar k bed pe lay aya or us ko bed pe ulta lita deya or hips pe kiss karnay laga.  May ne us k hips pe apna lund rakha to wo samajh gai k mayra irada kya hai.

‘nahi gand may nahi, dard hoga, gand marwake kafi din ho gaye hai’ maay nahi man raha tha or us se gand marwanay ko kehnay laga to wo boli acha cabnet se creem nikal ke apnay lund or mayri gand k surak pe laga lo.

May ne creem nikali or us k haath may deyta howa bola “tum khud cream mayray lund pe lagao.”

Us ne mayray lund ko piyar se kiss kya or phir us pe cream laga k massage karnay lagi. Mayra lund ayk bar phir tayar tha.

May ne bhe cream lay k us ki gand k surak pe lagai or phir apni fingure se surak ko kholnay laga.

 Jab gand thori se soft ho gai to may ne apna lund uski gand pe laga diya aur andar dalnay laga.

‘aram se dalo’ Bohut dard ho raha hai us ne dard se chilltay howay kaha. May slow slow lund ko under karnay laga, or phir may se zor laga k pora lund under dal deye wo dard se tarap uthi,

‘Ah mar deya zalim’ us ne dard may dobi hoi awaz may kaha.

May rukh gaya or 1, 2 minute tak aise he lund ko andar dale raha aur phir dhare dhare us ko thora sa nikala or phir under kar deya.  May bohut slow slow kar raha tha. Thori dar may mayri speed barhnay lagi ab may zor zor se lund ko under bahar kar raha tha or aunty ko bhe as maza a raha tha or wo keh rahi thi

‘ah or zor se or zor se’

15 minut tak may us ko gand may lund dal k under bahar karta raha. Main lund ko chut aur gand main dal ke chod raha tha. Baby ek baar jhar  gayi thi. Or ab dosri bar jharnay ko thi main bhi jharnay ko tha. May zor zor se dhakay marnay laga.

‘baby meri rani main jhar raha hun’

‘ha ha mere raja dal de pani gand ke andar’ baby ne body sakht kar de dono ka pani nikal gaya. 5 minut tak mein uske uper pada raha. Phir woh mere uper ake muje kiss karane lagi.

Is k baad hum 10 minute tak lipat k laytay rahay, phir hum saath he bathroom men gaye. Hum dono saath he nahai or nahatay howay bhe baby aunty mayray lund se khelti rahi or may bhe us k nipple chosta raha. Us ne khud he mujh ko apny haath se nihlaya. Jab hum Fresh hone ke baad bahar aye to baby ne muje ek cup chai pilai.

Main fresh ho gaya tha. Use apni bachi ko lane school jana tha. Mujhe raat ko ane ko kaha. Main bhi khush tha. Raat ko khana kha ke baby aunty ke ghar gaya. Tab tak us ki bachi so gayi thi. Phir raat hum ne phir program keya.

ab jab bhe aunty ka husband ghar se bahar hota or wo ghar may akele hoti to mujh ko bula layti or phir hum khob apni apni piyas bujhatay.

Hamari dosti 1 saal tak rahi is doran hum ko 2, 3 bar milnay ka moqa mila kyun k us ki sas her time ghar pe he hoti thi phir us k husband ka transfer Lahore ho gaya or is tanrah wo mujh se dor ho gai. Aj itnay saalo baad bhe mujh ko us ki garam garam choot ki yaad ati hai to muth mar layta hun.


Teacher Ko Khush Kia



Teacher Ko Khush Kia

Aj main ap ko apnay ek dost ki kahani suna raha hun wo bhe us ki zabani, umed karta hon ap ko pasand aye gi 

Mera nam Nasir hai aur may Karachi mein rehta hon ye takreeban 03 saal pehlay ki baat hai. Tab mere exams khatam ho chuke the. Meri English madam bohat hi sexy hai us ke perfect breasts hain. Aur wo kapray bhi ese pehnti keh us ke jism ka kuch hissa nazar aata. Jese hi class main aati us ke nipples khade hote the. Tight kameez pehenti aur bra bhi nipples ke khade hone ki waja se tight rehte. Nipples apna nishan us par bana lete. Kher main roz us ke saath apne app ko imagine karta. Un ka naam Madam Shagufta tha. Age 28 the.


Height 5'3 hai aur bohat tight body hai. Us ki shadi ho chuki hai magar wo apne husband se khush nahin thi. Kher main English paper lekar un ke ghar paper discuss karne gaya. Wo Shalwar kameez may bohut he khoobsoorat lag rahi the. Us ki kameez thodi choti thi. Un ke ghar main khamoshi se thi lagta tha jese koi nahi ho. Us ke baad unhon ne mujh se kaha ke main Notes lati hoon phir discuss karte hain. Unhon ne mujhe apne kamre se aawaz de aur kaha keh yahan aa jao. Main chala gaya.



Notes  kamre main unchi jagan padi thi. Uf kya scene tha madam notes ko lene ke liye upper hotin aur un ki shirt bhi unchi ho jati. Un ki back nazar aati. Mera to ussi waqt khada ho gaya. Main un ke pass gaya aur main ne mazakya andaz se kaha madam main app ko uthata hoon app Notes utarlein. I was not expecting that answer from her. Unhon kaha mujhe tum utha sakte ho.



Main ne jaldi main jawab diya yes madam. Unhon ne kaha theek hai to ajj tumhari taqat dekhoon. Unhon ne kaha keh tum mujhe peeche se utha kar uncha karo aur Nots utarti hoon is se tumhare taqat ka pata chal jae ga. Ye baat to may ne mazak may kehi thi lykin jab madam ne kaha to may khush ho gaya kyun k unho ne to mayray dil ki baat keh de thi, Main to chahta he ye tha main maan gaya. Main ne un ko back se zor se pakar kar uncha uthaya. Un ka weight kafi tha magar main ne use utha he liya. Un ke hips mere stomach se lag rahe the wo abhi notes upper dhood rahi thi aur mujh se poocha thake to nahin main ne kaha nahin. Main ne use thoda sa neeche kiya aur us k hips ab mere khade hue lund ke saath lagne lage. Unho ne kuch bhi na kaha. Mujh ko aysa lag raha tha k barson ki khawahish puri hona ja rahi hai. Main ne poocha madam notes milay ya nahin unho ne kaha sabar karo.



Main ahista ahista apna haath un shirt ke neeche lejana shuroo kar deya. Un ko laga keh main thak gaya hoon aur wo phisal rahi hain. Kher mere haath un ki body ko lag raha tha or mayra lund, bs underwear phatnay laga tha. Us ne foran mujhe kaha ke tum mujhe utar do main ne jaldi se unhain utar deya. Ufff  un ke hard nipples mere andar current dhora rahe the. Us ne kaha notes nahin mil rahi main tumhare liye kuch peene ko lati hoon phir ese he paper discuss kar lein ge.  Main ne kaha ok. Wo kitchen chali gae. Main ab kamre main akela tha. Un k jatay he main ne apne lund ko jaldi se haath se dabaya kyun k lund bohut ziyada ubrah hwa nazar a raha tha.


Kher main abhi apna lund daba hi raha tha k madam sharbat le kar aaein.  Wo kab kitchen se nikli kuch pata nahin chala. Unhon ne mujhe lund dabate dekh liya main ne jaldi se apne lund par se haath utha liya. Kisi had tak main chahta tha keh Madam mujhe dekhe.

Madam ne mujhe smile de aur shararti andaz se poocha ye kya kar rahe the. Main pareshan ho k kaha kuch nahi.  Kher I was also feeling embarrassment. Unh one mujh ko sharbat deya or phir khud bhe mayray barabar a k beth gain . or mujh ko dekhtay howay kehnay lagn, batao na kya kar rahay thay….  May ne koi jawab nahi deya to wo mayray or kareeb ho gaen or phir dobara boli “batao na kya kar rahay thay”, ye kehtay howay unho ne ek haath mayri ran pe rukh leya or mujh ko bohut ghehri nazron se dekhnay lagi. Wo mayray itna pass bethin thin k mujh ko apnay pe control karna mushkil ho raha tha, Main ne un ki ankhon main dekha to mehsoos howa k wo bhe bohut piyasi hain.  Mayra dil chah raha tha k un k un k mumay munh may lay kar sucking karna shuru kar dun. May pehlay he bata chukka hun k mayra lund pant may se ubra howa tha or lag raha tha k pant phar k bahar a jai ga.



May khamosh raha to unho ne mayri pant ki taraf dekhtay howay kaha k “ye pant may tum ne kya chupa rakha hai?”, or ye kehtay howay unh one apna haath mayri pant k ubhray howay hissay per rakh deya, ab mayra apnay pe control karna mumkin na raha or may ne bhe kareeh ho k un ko galay se laga leya or un k face pe kissing karnay laga or phir un ko sofay pe he lita deya or un k chest pe kissing karnay laga, unho ne ankhain band kar lain or lambay lambay sans laynay lagin, may bhe gram ho chukka tha or un k mammay munh may lay k chosnay laga to wo boli ye kya kar rahay ho? Or shararat se boli k Kya kapro may se he kha jao gay, ye suntay he may ne un ki kameez upar kar de or un ki kameez may he sir daal k mummay chosnay laga.



Wo bhi garam ho gae aur meri kissing usse aur garam karti gae us ne sofa sakht pakad liya aur mujhe karne diya jo main karna chahta tha. Phir main ne un ki shirt utari de or apni bhi. Wo itni garam ho chuki thi k lal ho rahi thin. Phir may ne un ki shalwar bhe utar de or un ki naaf k nechay k hissay pe kissing karnay laga, un ki choot pe chootay chootay baal thay wo k gori gori jild pe bohut piyaray lag rahay thay. May ne un ki choot pe kiss kya or phir haath phernay laga. Wo mast ho chuki thin or awaz nakal rahi thin, phir may ne kissing kartay kartay un ko ulta kar deya or un k hips pe kissing karnay laga. Un k hips bohut soft or garam thay may ne hips pe apna sir rakh deya or late gaya is doran may ne apni pant bhe utar de.



Jaisay he may ne pant utari woe k dam bechain c ho gain or mayra lund pakar k apni garam choot may dalnay ki koshish karnay lagi. May un ko or ziyada garam karna chahta tha is leye may un ki kamar par haath phernay laga, to unhay or bhe maza aynay laga, phir may un ki back par late gaya, mayra mera lund un hips se hota howa choot se touch ho raha tha.


Mera lund bhi garam tha aur un ki chut bhi garam thi. Bas main ne back pe laytay laytay he peeche se un k mamme pakar leye or mammon ko bohat zor se dabanay laga. Phir un ko seedha kiya aur un k mamme chusnay laga. Uffff wo bohut ziyada tasty thay. Is doran unho ne mayra lund pakra howa tha or lund ko musalsal masal rahi thi. Us k nipples ko suck karne k baad us ki tangein stretch keen aur upar kar deen aur apna lund us main dala. Kya tight choot thi. Phir bhi main ne us main asani se andar kiya thoda gaya aur usse maza aaya. Wo ah..oh..plz aur jesi awazein nikal rahi thi. Main ne aur zor lagaya aur pura lund us main dal diya wo bohat cheekhee lekin unho ne mujhe roka nahi, main ne ab apna lund andar bahar karna shuroo kar deya.



May ne Takreen 20-25 minute unhain fuck kiya. Phir may discharge ho gaya or wo bhe discharge ho gai. Uffff kitna maza tha. Main ne socha bhi na tha k mujh ko aysa moqa mil jai ga. Discharge honay k baad hun wo mujh se lipat gain or mujh ko zor se lipta k kissing karnay lagi, hum kafi dar take k dosray se lipat k laytay rahay itnay may mayra lund phir dobara khara ho gaya to wo hansnay lagi or kehnay lagi “ye to phir jag gaya hai” or phir se lund pr haath phirnay lagi. Phir us ne mayra lund apnay monh may lay leya or us ko chosnay lagi, 10 minute tak us ne lund choosa or mujh ko wo maza deya k may kabhi bhool nahi sakta. Kher main ne unhay phir pure jism par kissing ki aur phir us ko ulta kar k apna lund un k hips k beech may rakh deya or hips pe lund ragarnay laga, or ahesta ahesta jaga bana k thora thora under karnay laga, unhay dard bhe ho raha tha or maza bhe a raha tha, phir may may ne lund under dala to wo dard se chekhnay lagi, may ne pareshan ho k kaha k nikal dun to isaray se mana karnay lagi. May ne slow slow undar bahar karna shuru karna shuru kar deya. Or phir under he under he discharge ho gaya or thak k un k upar he gir gaya.



Hum thori dar is tarhan he paray rahay or phir hum dono ne saath saath he bath leya, hum don one ek dosray ko nehlaya or nehlatay nehlatay ek bar phir kar leya. Naha ka bahar niklay to unho ne towel se mayra pora jism khusk kya or phir apnay haath se he kapray bhe phenay. Wo bohut ziyada khush thi jaisay koi bohut bara khazana mil gaya ho.


baad may mujh ko 2 bar or moqa mila or may ne un ko dil bhar k choda, wo bhe mujh se bohut khush thin, phir kuch din baad un k husband Dubai chalay gay to wo bhe wahan sift ho gain. 


 

موبائل دوستی سے چدائی تک

موبائل دوستی سے چدائی تک 


میرا نام تنویر ہے اور میں کراچی  کا رہنے والا ہوں جو کہانی میں آپکو سنانے جا رہا ہوں یہ ایک ایسے واقعہ پر مبنی ہے جو میرے ساتھ تقریبا دو سال پہلے پیش آیا

تو بات کچھ یوں ہے کہ دوسال پہلے جب میں آفس میں کمپیوٹر پر کام کر رہا تھا تو میرے موبائل پر گھنٹی بجی جب میں نے موبائل کی سکرین پر دیکھا تو اس پر کوئی انجان نمبر ڈسپلے ہو رہا تھا خیر میں نے کال اٹینڈ کی اور ہیلو کہا مگر دوسری طرف سے کوئی جواب نہ آیا۔ میرے کافی دفعہ ہیلو ہیلو کہنے پر بھی جب کوئی جواب نہ آیا تو میں نے کال کاٹ دی۔ میں دوبارہ اب پھر اپنے کام میں مصروف ہو گیا۔ کچھ دیر بعد پھر اسی نمبر سے میرے موبائل پر دوبارہ کال آئی اور میں نے دوبارہ کال رسیو کی تو موبائل پر دوبارہ وہی رسپونس ملا یعنی دوسری طرف سے کوئی بھی نہ بولا اور پھر کال کٹ گئی۔ اب میں اس طرح کی بار بار کال سے تنگ آ چکا تھا ایک طرف کام کا برڈن تھا اور دوسری طرف اس طرح کی بارر بار کالز۔ ابھی میں دل ہی دل میں کال کرنے والے کو بڑا بھلا کہہ رہا تھا کہ میرے موبائل کی دوبارہ گھنٹی بجی میں نے موبائل پر نمبر دیکھا تو دوبارہ پھر اسی نمبر سے کال آ رہی تھی اب کی بار میرا پارہ آسمان پر تھا اور میں نے جلدی سے کال اٹینڈ کی اور بس گالیاں نکالنے شروع کردیں۔ میں نے کال کرنے والے کو فون پر کہا بہن چود کیا گانڈ پروانی ہے جو بار بار فون کر رہا ہے تیر گانڈ پھاڑون ، تیری بہن کی کس، تیری بھدی میں لن ڈالوں میں اسی طرح موبائل پر بار بار تنگ کرنے والے کو گالیاں نکال رہا تھا اور جیسے ہی میں نے کال کرنے والے کو کہا کہ اگر میرا لن اتنا ہی پسند آ گیا ہے تو بہن چود منہ سے کیوں نہیں بولتا۔ تیری چدائی کی خواہش پوری کر دوں گا۔ ابھی میں نے یہ الفاظ کہے ہی تھے کہ دوسری طرف سے ایک نسوانی آواز سنائی دی تو کر دیں ناں خواہش پوری اور فون بند ہو گیا۔

اب فون کے بند ہوتے ہی سب سے پہلے میرا دھیان اپنے جاننے والوں کی طرف گیا کہ کیا یہ سب کوئی مزاق کر رہا ہے۔ کون ہو سکتا ہے۔ اب میرا دھیان کام کی بجائے اس فون کال کرنے والی کی طرف تھا خیر میں نے وہ نمبر اپنے موبائل میں سیو کر لیا۔ اب رات کو جب میں کھانا کھانے کے بعد اپنے کمرے میں سونے کے لیے آیا تو میں نے اسی نمبر پر کال کرنے کا سوچا کہ دیکھا جائے کہ کون ہے اور کیا چاہتا ہے۔ خیر میں بیڈ پر لیٹ گیا اور اسی نمبر پر کال ملا دی۔ اب اس نمبر پررنگ ہو رہی تھی مگر کسی نے بھی فون رسیو نہ کیا۔ میں نے دوسری بار دوبارہ کوشش کی۔ تو دوسری رنگ پر ہی فون رسیو ہو گیا۔ اور دوسری طرف سے کسی لڑکی نے ہیلو کون ؟ کہا تو میں نے کہا آپ کے اس نمبر سے صبح میرے اسی نمبر پر کافی کالز آ رہی تھیں کیا آپ بتا سکتی ہیں کہ آپ کون ہیں اور کیا چاہتی ہیں۔ تو اس لڑکی نے کہا کہ اس نمبر سے آپ کو کال کیسے آ سکتی ہے یہ نمبر تو میرے پاس ہی ہوتا ہے اور میں نے تو آپکو فون ہی نہیں کیا۔ تو میں نے کہا دیکھیں میڈم آپ کا نمبر میرے فون کی رسیوڈ کالز لسٹ میں ابھی تک سیو ہے مجھے بھلا آپ سے جھوٹ بولنے کی کیا ضرورت ہے۔ تو وہ لڑکی بولی اس کا مطلب ہے کہ میں آپ سے جھوٹ بول رہی ہوں تو میں نے کہا یہ تو مجھے نہیں پتا ہاں البتہ میں سچ بول رہا ہے میں بس اتنا جاتنا ہوں ۔ میرے اس جواب پر اس لڑکی نے کہا اچھا چلیں مان لیتے ہیں کہ صبح آپکو فون میں نے ہی کیا تھا اب بولیں کیا کریں گے آپ ؟ تو میں نے کہا میں نے آپکو فون نہیں کیا تھا فون آپ نے کیا تھا تو آب بولیں آپ کیا چاہتی ہیں۔ میرے اس سوال پر اس لڑکی نے مجھے ایسا جواب دیا جس کی میں امید بھی نہیں کر سکتا تھا یعنی میں نے ایسا سوچا بھی نہیں تھا کہ کوئی لڑکی ایسی بات کر سکتی ہے۔ اس لڑکی نے آپ بتائیں آپکو کیا چاہیئے کے جواب میں کہا کہ مجھے آپکا لن چاہیئے جس کا ۔ میں یہ جواب سن کر کچھ دیر خاموش ہو گیا۔ پھر وہ  لڑکی دوبارہ مجھ سے مخاطب ہوئی اور بولی کہ صبح تو تم بڑے دعوے کر رہی تھے اب کیا ہوا۔ کیا وہ سب دعوے ہی تھے۔ لگتا ہے مردانگی ختم ہو گئی اور یہ کہنے کے بعد وہ لڑکی قہقہہ لگا کر ہنسی۔ میں نے کہا ایسی کوئی بات نہیں۔ میں نے آج تک کسی لڑکی کے ساتھ یہ سب نہیں کیا مگر مجھے اپنے آپ پر اتنا بھروسہ ہے کہ تمیں صبح میں تارے دکھلا دوں۔ یہ سن کر وہ لڑکی دوبارہ قہقہہ لگاکر ہنسی اور بولی اچھا تو دیکھ لیتے ہیں۔ میں نے اسے پوچھا بولو تم کہاں رہتی ہو تو اس نے کہا گھر میں ، یہ کہہ کر وہ پھر قہقہہ لگا کر ہنسی میں نے کہا جناب کا گھر کہاں ہے تو اس نے کہا یہ بات چھوڑو میں تمہیں کل فون کروں گی پھر دیکھتے ہیں کہاں ملنا ہے میں نے کہا ٹھیک ہے۔


بس اس لڑکی سے بات کرنی تھی کہ پوری رات مجھے نیند ہی نہ آئی پوری رات اس لڑکی کے بارے میں ہی سوچتا رہا میرا لن پوری رات کھڑا رہا صبح چار بجے جا کر آنکھ لگی اور خواب میں اسی لڑکی کے تصور کو چودتا رہا اور اسی دوران اختلام بھی ہو گیا۔

اب دن چڑھا اور روز کی طرح میں آفس چلا گیا مگر آفس میں اب میرا دل کہاں لگ رہا تھا بس تھا تو اسی لڑکی کی کال کا انتظار۔ اب ایک ایک منٹ بہت مشکل سے کٹ رہا تھا آپکو تو پتا ہے کہ مفت کی چوت کو کون چھوڑتا ہے۔ خیر میں ساتھ ساتھ کام بھی کرتا رہا اور کال کا انتظار بھی دن کے 12 بجے ہوں گے کہ میرے فون کی گھنٹی بجی تو میں نے ڈسپلے پر دیکھا تو اسی لڑکی کے نمبر سے مجھے کال آ رہی تھی میں نے جلدی سے فون آٹینڈ کیا تو وہی رات والی لڑکی نے مجھےسلام کیا اور حال چال پوچھنے کے بعد پوچھا کہ اس نے کہیں مجھے ڈسٹرب تو نیں کیا تو میں نے کہا نہیں میں تو صبح سے آپ کی ہی کال کا انتظار کر رہا تھا۔ میری یہ بات سن کر وہ ہنسنے لگی۔ پھر میں نے پوچھا کیا پروگرام ہے جناب کا تو اس نے کہا آپ ڈیفنس آ سکتے ہی کیا تین بجے تک میرا ڈیفنس میں گھر ہے بس آپ یہاں پہنچ کر مجھے کال کر لیں اسی نمبر پر میں نے کہا ٹھیک ہے میں پورے تین بجے آپ کے پاس ہوں گا ۔ پھر میں نے جلدی سے اپنا آفس کا کام مکمل کیا اور تین ڈھائی بجے آفس سے نکل پڑا اور تقریبا پورے ٹائم پر میں اس کی بتائی گئی ڈیفنس کے بلاک میں تھا میں نے اس کے دیئے ہوئے نمبر پر فون کیا تو اس نے کہا آپ وہیں رہو میں آتی ہوں۔ اب میں خیالوں میں اس کا سکیچ بنا رہا تھا کہ وہ ایسی ہو گی وہ ویسی ہو گی۔ ابھی میں انہی خیالوں میں تھا کہ میرے پاس ہنڈا کار آ کر رکی ۔ اس میں بہت ہی خوبصورت لڑکی بیٹھی تھی اب میں دعا کر رہا تھا کہ کاش یہ وہی لڑکی ہو جس سے میری آج ملاقات ہے اس لڑکی نے بھی میری طرف ایک دو بار دیکھا اور گاڑی میں بیٹھے ہوئے ہی اپنے بیگ میں سے اپنا موبائل نکالا اور کسی کو فون ملانے لگی۔ اس نے جیسے ہی اپنا موبائل اپنے کان کو لگایا میرے فون پر اسی نمبر سے بیل ہوئی میں نے فون اٹھایا تو اس لڑکی نے بھی مجھے پہچان لیا اور گاڑی میں بیٹھے ہوئے ہی میری طرف دیکھ کر مسکرانے لگی اس نے فون پر مجھے کہا آ جاو۔ یہ میں ہی ہوں اور میں اس کی گاڑی میں جا کر بیٹھ گیا۔ اس نے ٹائٹ قسم کی پینٹ اور شرٹ پہن رکھی تھے گاڑی کی سیٹ پر بیٹھے ہوئے اس کے چوتر صاف دکھائی دے رہے تھے وہ نہ صرف بہت خوبصورت تھی بلکہ وہ نسوانی حسن سے بھی مالا مال تھی۔ اس کے ممے اتنے ٹائٹ اور بڑئے تھے کہ کوئی بھی انھیں دیکھے بنا نہیں رہ سکتا تھا۔ پھر وہ خود ہی مجھ سے مخاطب ہوئی اور بولی کہ جی جناب سنا ہے آپ چدائی کے بڑے ماہر ہیں اس کے یہ الفاظ کہنے تھے کہ میں شرما گیا اور سوچنے لگا کیا کوئی لڑکی اتنی بے باق بھی ہو سکتی ہے۔ مگر میں نے ہمت کی اور کہا آپ کو کوئی شک ہے تو وہ مسکرانے لگی۔ پھر اس کی گاڑی ایک بڑی سی کوٹھی کے سامنے جا کر رک گئی ایک ملازمہ نے دروزازہ کھولا اور وہ مجھے لے کر گھر کے اندر آ گئی اس کا گھر بہت شاندار تھا اس نے گاڑی گھر کے اندر پارک کی اور مجھے لے کر ٹی لانج میں آ گئی اس نے مجھے ٹی وی آن کر کے دیا اور مجھے کہا کہ وہ ایک منٹ میں آتی ہے اب میں سوچ رہا تھا کہ وہ لگتا ہے فریش ہونے گئی ہے میں سچ بتاوں میرا ٹی وی کی طرف بالکل بھی دھیان نہیں تھا میں تو اس لڑکی کے بارے میں ہی سوچ رہا تھا۔ پھر اس کی ملازمہ میرے سامنے فروٹ اور دوسری کھانے پینے کی چیزیں رکھ کر چلی گئی میں نے ان میں سے ایک سیب اٹھایا اور اسے کھانے لگا ۔ اسی دوران وہ لڑکی بھی باہر آ گئی اس نے مجھے کہا اور لیجئے آپ نے تو کچھ لیا ہی نہیں ۔ میں نے کہا نہیں میں نے کچھ دیر پہلے ہی کھانا کھایا ہے اس لیے اتنی بھوک نہیں ہے۔ پھر اس نے کہا آیئے میں آپکو اپنا بید روم دیکھاتی ہوں اور وہ مجھے ساتھ لے کر اپنے بیڈ روم میں چلی گئی۔ اس کا بیڈ روم بھی بہت شاندار تھا اندر اے سی پہلے سے آن تھا اس نے مجھے بید پر بیٹھایا اور خود ہی کمرا لاک کر دیا۔ وہ میرے پاس اسی بیڈ پر بیٹھ گئی اور بولی کہ آپ نے اپنا نام بھی نہیں بتایا اور نا ہی میرا نام پوچھا ہے۔ تو میں نے کہا میرا نام تنویر ہے تو اس نے کہا میرا نام مہوش ہے۔ میں نے کہا بہت پیارا نام ہے اپکا تو اس نے مسکراتے ہوئے کہا آپکا بھی نام بہت پیارا ہے اس کی بات پر میں بھی مسکرا دیا۔ پھر مہوش نے مجھے کہا کہ آپ سوچ رہے ہوں گے کہ میرے پاس سب کچھ ہے پھر بھلا میں آپکو اپنے ساتھ کیوں یہاں لائی ہوں ۔ میں نے کہا ہاں میں تو کب سے یہی سوچ رہا ہوں بلکہ آپ کے گھر والوں کے بارے میں بھی سوچ رہا ہوں ۔ تو اس نے کہا کہ میں شادی شدہ ہوں اور یہ گھر میرے شوہر کا ہے جو کہ امریکہ میں رہتے ہیں۔ تین سال پہلے انہوں نے وہیں کسی لڑکی سے شادی کر لی دو سال پہلے ان کا یہاں پاکستان چکر لگا تھا۔ میرے پاس دنیا کی ہر چیز ہے۔ مجھے یہاں کسی چیز کی بھی کمی نہیں ہے مگر میرے نصیب میں شوہر کا پیار نہیں ہے۔ ہر عورت کے لیے مرد کا پیار بہت ضروری ہے اور ایک شادی شدہ عورت کو اس کی کتنی طلب ہوتی ہے اس کا آپ اندازہ بھی نہیں لگا سکتے۔ اس دن میں نےجب آپ کو فون کیا تو اس سے پہلے میری میرے شوہر سے بات ہوئی تھی جسے میری زرا بھی پروا نہیں اور اس وقت جب اسے میں نے کہا کہ اگر تم پاکستان نہ آئے تو تمہاری طرح میں بھی یہاں لڑکوں کے ساتھ دوستیاں کرلوں گی تو اس نے یہ کہہ کر فون بند کر دیا کہ جتنی مرضی دوستیاں کر لو اور اس نے فون بند کر دیا اور میں نے غصے میں آپ کو رونگ نمبر ڈائل کر دیا۔ تم نے اس دن مجھے کہا کہ تم میری چدائی کی خواہش پوری کر دو گے بس پوری رات مجھے نیند ہی نہیں آئی میں نے مہوش کی کہانی سنی تو میرا لن کھڑا ہو گیا کیوں کہ یہاں تو رستہ ہی بالکل صاف تھا میں نے آگے پڑھ کر مہوش کو گلے لگا لیا اور کہا کہ میں تمہیں شوہر کا پیار دوں گا تمیں اس کی کمی کبھی محسوس نہیں ہونے دوں گا اور یہ کہتے ہی میں نے اپنے ہونٹ اس کے ہونٹوں پر رکھ دیئے اور اسے بے انتہا کس کرنے لگا۔ وہ بھی مجھے ایسے نوچنے لگی جیسے وہ عرصہ دراز سے اسی چیز کی پیاسی ہو میں نے اس کو کس کرتے ہوئے ہی بیڈ پر لیٹا دیا اور اس کی گردن پر کس کرنے لگا پھر میں نے اس کے مموں کی طرف ہاتھ بڑھائے اور قمیض کے اندر ہاتھ ڈال کر اس کے ممے دبانے لگا اس کے ممے دبانا تھے کہ اس کی حالت خراب ہونے لگی وہ اس قدر مدہوش ہو گئی کہ جیسے اسے دنیا کا ہوش ہی نہ ہو میں نے اس کو خود ہی اٹھایا اور اس کی قمیض اتار دی اب قمیض کے نیچے اس نے برا پہن رکھی تھی جس کا رنگ لال تھا۔ میں نے اس کے لیٹے ہوئے ہی اپنے ہاتھ اس کی کمر پر لیجا کر اس کے برا کی ہک کھول دی اور برا کو اس کے مموں سے ہٹا دیا اب اس کے دونوں ممے آزاد تھے میں نے آج تک ایسے ملائی کی طرح سفید ممے نہین دیکھے تھے مجھ سے اب ان مموں کو دیکھ کر رہا نا گیا اور میں نے اس کے مموں کو اپنے منہ میں ڈال کر چوسنا شروع کر دیا۔ میں کبھی اس کے مموں پر کس کرتا تو کبھی اس کے مموں کے نپلز اپنے منہ میں ڈالتا اور کبھی ان پر تھوڑا تھوڑا کاٹتا جیسے جیسے میں اس کے مموں پر پیار کرتا وہ اس قدر مدہوش ہوتی جاتی۔ پھر میں نے اس کی شلوار کی طرف رخ کیا اور اس کی شلوار جس میں لاسٹک ڈلا ہوا تھا اتار دیا ۔ اس کی چوت بہت پیاری تھِی یعنی عورتوں کی عموما چوت بال صاف کر کر کے کالی ہو چکی ہوتی ہے مگر اس کی چوت میں ایسی کوئی بات نہ تھی اور نہ ہی اس کی چوت پر کوئی بال تھا اس کا مطلب یہ تھا کہ وہ چدوانے کی مکمل تیاری کر کے آئی تھی۔ میں نے اس کی چوت کے اندر اپنی انگلی گھسانا چاہی تو میں نے محسوس کیا کہ اس کی چوت بہت زیادہ گیلی ہو چکی ہے۔ میں نے پھر بھی اپنی انگلی اس کی چوت میں گھسا دی۔ میں اپنی انگلی کو اس کی چوت میں گھمانے لگا کبھی میں اپنی انگلی کو باہر نکالتا اور اس کی چوت کے باہر والے حصے پر اپنی انگلی آہستہ آہستہ پھیرتا۔ میرے انگلی پھیرنے سے مہوش کی حالت اور زیادہ خراب ہوتی جاتی یعنی وہ مدہوشی کی وادیوں میں پہنچ کر آہستہ آہستہ میں سے آوازیں نکالتی جاتی۔ مجھے اس کی آوازیں بہت اچھی لگ رہیں تھیں۔ پھر میرا لن جو کافی دیر سے صبر کیے ہوئے تھا اب بے قابو ہونے لگا اب مزید صبر نہ کیا جا سکتا تھا تو میں نے اپنے لن کو سیدھا کیا اور مہوش کی چوت کا نشانہ لگایا اور دوسرے ہی لمحے میرا لن مہوش کی چوت میں تھا میرا لن مہوش کی چوت میں گھسنا تھا کہ مہوش نے آنکھیں کھول لیں۔ میرے لن کے اس کی چوت میں گردش کرنے سے اس کے ہوش اڑ گئے تھے پھر میں نے تھوڑا اور جھٹکا دیا تو اس نے کہا تنویر ذارا آرام سے ڈالو درد ہو رہا ہے کافی عرصے بعد جو کر رہی ہوں پھر میں ہلکے ہکے جھٹکے دینے لگا تو مہوش دوبارہ مدہوش ہونے لگی۔ اب کہ وہ پہلے سے زیادہ حد تک انجوائے کر رہی تھی یہ بات اس کی ہلکی ہلکی سسکیاں بیان کر رہیں تھیں۔ پھر اس نے آہستہ سے کہا تنویر تھوڑا زور سے کرو۔ میں نے جھٹکوں کی رفتار تھوڑا تیز کر دی۔ پھر اس نے کہا تھوڑا اور زور سے۔ تو میں نے تھوڑا اور زور سے جھٹکے دینا شروع کر دیے۔ پھر بیس منٹ بعد پہلے مہوش اور پھر میں بھی جھڑ گیا۔ لن عموما ڈسچارج ہو کر سو جاتا ہے مگر مہوش کی چوت کی ایسی گرمی تھی کہ میرا لن ابھی تک ڈسچارج ہونے کے بعد بھی کھڑا تھا اور دوبارہ چدائی کے لیے تیار تھا۔ میں نے محسوس کیا کہ مہوش کی بھی یہی حالت ہے میں نے پھر مہوش کی طرف رخ کیا اور اس کو الٹا لٹا دیا۔ اب میں مہوش کی کمر پر کسنگ کر رہا تھا اور وہ بڑی طرح سسکیاں لے رہی تھی۔ پھر میری نظر دوبارہ مہوش کی بڑی سی گانڈ پر پڑی تو میری نیت اس کی گانڈ پر خراب ہونے لگی سچ میں اس کی چوت ہی نہیں گانڈ بھی بہت سیکسی تھی میں نے اس کی کمر پر کسنگ کرنے کے دوران ہی اپنا لن اس کی گانڈ پر رگڑنا شروع کر دیا۔ اب ایک ہاتھ میں میرا لن اور میرا دوسرا ہاتھ بیڈ پر تھا۔ میں ایک ہاتھ سے اپنا لن پکر کر مہوش کی گانڈ پر رگڑ رہا تھا اور پھر میں نے لن کو چھوڑا اور اپنے ہاتھ کی انگلی سے مہوش کی گانڈ کا سوراخ چیک کیا اب مجھے اندازہ ہو گیا کہ مہوش کی گانڈ کا سوراخ کہاں ہے بس میں نے دوبارہ اپنا لن اپنے ہاتھ میں پکڑا اور اسے مہوش کی گانڈ پر ڑگڑنے لگا اور جب میرا لن مہوش کی گانڈ کے سوراخ پر پوری طرح پہنچا میں نے اپنے لن کا ٹوپا اس کی گانڈ میں گھسا دیا۔ میرے مطابق مہوش اس کے لیے تیار نہ تھی مگر اب لن کا ٹوپا اس کی گانڈ میں پہچ چکا تھا میرے لن کے ٹوپے کے گانڈ میں داخل ہوتے ہی مہوش زور سے چلائی پلیز ادھر سے مت کرو۔ پلیز اسے باہر نکالو یہاں درد ہو رہا ہے۔ میں نے کہا میں نے باہر نکال لیا ہے تو اس نے کہا نہیں ابھی اندر ہے پلیز اسے باہر نکال لو مجھے بہت درد ہو رہا ہے میں نے لن اس کے اندر ڈالے ہوئے ہی اس کی کمر پر کسنگ شروع کر دی۔ اور اسے کہا کہ لن باہر ہے اوردرد ابھی ختم ہو جائے گا میرے پیار کرنے سے اس کا کچھ دھیان میری کسنگ  کی طرف لگ گیا تو میں نے اپنا باقی لن بھی اندر داخل کر دیا اس بار مہوش پھر دوبارہ چلائی مگر اس بار اسے اس قدر درد نہ ہوا تھا جتنا اس کی چیخوں سے پہلے محسوس ہو رہا تھا۔  اب میں نے کچھ دیر پھر اس کی کمر پر کسنگ کی اور پھر آہستہ آہستہ اس کی گانڈ کو لن سے جھٹکے لگاتے ہو جھٹکوں کی رفتار تیز کرتا گیا۔ اب میں نے محسوس کیا کہ اب مہوش کی گانڈ بھی میرے لن کی طرح انجوائے کر رہی ہے۔ اس طرح میں نے مہوش کی گانڈ کے دو اور اس کی پھدی کے تین شارٹ لگائے اور مہوش کے گھر سے میں رات دس بجے واپس آیا۔ اب بھی ہفتے میں ایک بار میری مہوش سے ملاقات ضرور ہوتی ہے اور ہم خوب سیکس انجوائے کرتے ہیں۔
         



نہر والے پل سے

نعیم بہت تیزی سے گاڑی بھگا رہا تھا ،  سو کے قریب سپیڈ والی سوئی چلی گئی تھی ، نعیم اکیلا ہی تھا وہ گاڑی کو چیک کر رہا تھا کہ اب انجن کیسا کام کر رہا ھے پہلے گاڑی پچاس تک بڑی مشکل سے پہنچتی تھی لیکن اب گاڑی ایسے تھی جیسے زیرو میٹر ، میٹر کی سوئی ایک سو بیس تک جا رہی تھی  -نعیم پنجاب پولیس میں ایک ڈرائیور تھا ، آج صبح وہ ڈیوٹی پہ واپس آیا تھا تو اسے پتا چلا تھا کہ کل گاڑی کا کام کروایا گیا ھے  اس لئے وہ چیکنگ کے لئے نکلا تھا باقی ملازم ابھی ناشتہ کر رہے تھے اس لئے وہ اکیلا ہی تھا  - نعیم چیکنگ کے بعد نارمل سپیڈ سے واپس پولیس سٹیشن آ رہا تھا کہ نہر کے پاس اسے کچھ لوگوں  نے رکنے کا اشارہ کیا ، نعیم نے گاڑی روکی تو لوگوں نے اسے بتایا کہ ایک لڑکی خودکشی کرنے لگی تھی اور ہم نے اسے پکڑ رکھا ھے لیکن ہمیں وہ گالیاں دے رہی ھے ، نعیم نے لڑکی کا پوچھا تو وہ ایک طرف کھڑی تھی  اور دو تین مرد اس کے اردگرد کھڑے تھے ، نعیم نے لڑکی کو اپنی طرف آنے کا اشارہ کیا تو وہ گاڑی کے دروازے کے پاس آ گئی -
نعیم نے پوچھا کیوں خودکشی کرنے لگی تھیں ؟

 وہ آگے سے خاموش رہی

نعیم نے لوگوں سے پوچھا کہ اسے روکا کس نے تھا ؟ تو ایک آدمی آگے آیا ،
بقول اس کے "کہ لڑکی نے جوتا اتارا اور اپنا دوپٹا اتار کر پل کی دیوار پر رکھا اور دیوار پر چڑھنے لگی تو میں نے اسے پکڑ لیا "-
نعیم نے پوچھا تم اس وقت اس کے پاس کیسے پہنچے ؟
میں وہاں سے گزر رہا تھا میری نگاہ اس پر تب پڑی جب یہ پل پر کھڑی ہوئی ، میرے سامنے اس نے دوپٹا اتارا اور جب جوتا اتار کر اوپر دیوار پر چڑھنے لگی میں اس وقت قریب پہنچ گیا تھا اور اسے پکڑ لیا، اس آدمی نے تفصیل بتائی -
نعیم نے لڑکی سے دوبارہ پوچھا کہ کس وجہ سے مرنے لگی تھیں لیکن وہ خاموش رہی -نعیم نے لڑکی کا جائزہ لیا اس کے اندازہ کے مطابق  لڑکی کی عمر لگ بھگ بائیس سال تھی اور وہ ایک قبول صورت لڑکی تھی ، سانولہ رنگ ، پتلے پتلے ہونٹ ، اور بھاری چھاتی مطلب کہ نسوانی حسن سے مالا مال تھی   اور قد بھی عام عورتوں سے تھوڑا نکلتا ہوا تھا اسے کسی حد تک خوبصورت سمجھا جا سکتا تھا جب نعیم نے دیکھا کہ وہ خاموش ھے اور اس کے سوالوں کا جواب نہیں دے رہی تو اس نے لوگوں سے پوچھا کہ کوئی اس کو جانتا ھے ؟       تو سب نے نفی میں جواب دیا
نعیم نے اسے گاڑی میں بیٹھنے کا کہا تو وہ پیچھے بیٹھ گئی ، نعیم نے لوگوں سے پوچھا ساتھ میں کون جائے گا بطور گواہ ؟ 
کسی نے بھی ساتھ جانے کی حامی نہ بھری ،
لوگ پولیس سے ایسے ڈرتے ہیں جیسے بواسیر والا بندہ سالن میں تیز مرچوں  سے ،
نعیم نے جب دیکھا کہ ساتھ کوئی بھی نہیں جائے گا تو اس نے لڑکی کو آگے افسر والی سیٹ پہ بلا لیا مبادہ پیچھے سے کہیں کود ہی نہ جائے -
لڑکی نعیم کے ساتھ بیٹھ گئی اور نعیم نے گاڑی آگے بڑھا دی ، نعیم نے اس کی طرف دیکھا وہ خاموشی سے ہونٹ کاٹ رہی تھی ، نعیم کی نگاہ اس کی چھاتی پر پڑی جس پر دوپٹا ہٹا ہوا تھا ، لڑکی کی تگڑی چھاتی دیکھ کر نعیم کی پینٹ میں تھوڑی ہلچل ہوئی اور اس کے سات انچ لمبے موٹے لن میں اکڑاہت پیدا ہونا شروع ہو گئی ، نعیم نے اپنا ہاتھ گئیر سے اٹھا کر اپنے لن پہ رکھا اور اسے مسلنے لگا ، لڑکی نے کن آنکھیوں سے نعیم کے ہاتھ کی طرف دیکھا جس سے اس نے اپنا لن پکڑا ہوا تھا اور اسے مسل رہا تھا
نعیم نے جب دیکھا کہ لڑکی نے اسے لن مسلتے دیکھ لیا ھے تو اس نے اپنا ہاتھ وہاں سے اٹھا کر سٹئیرنگ پر رکھ لیا
-
اس نے لڑکی سے اس کا نام پوچھا 
سونیا لڑکی نے آہستہ سے جواب دیا
نعیم نے اس سے پوچھا کیوں مرنا چاہتی ہو ؟
سونیا نے کوئی جواب نہیں دیا سونیا خاموش تھی لیکن نعیم کے ذہن پر سیکس سوار ہو چکا تھا اور اس کے ذہن پر شیطانیت چھا چکی تھی
اس نے سونیا کی طرف دیکھا اس کی جاندار چھاتی اب بھی علیحدہ ہی نظر آ رہی تھی دوپٹا ہٹا ہوا تھا ، نعیم نے دوبارہ سے پوچھا سونیا کیوں خودکشی کرنے لگی تھیں ؟
امی سے لڑائی ہوئی تھی اسلئے مرنا چاہتی تھی سونیا نے اھستگی سے جواب دیا،
ابھی تمہاری عمر ہی کیا ھے ، تم نے ابھی دیکھا ہی کیا ھے اس دنیا میں ؟(نعیم کا ہاتھ سٹیئرنگ سے گئیر پر )  یہ دنیا بہت خوبصورت ھے   تمہیں شاید ابھی اس کا احساس نہیں ھے - یہ کہتے ہوئے اس کا ہاتھ سونیا کے ران پر رینگ گیا 
سونیا کی نرم ران پر نعیم کا ہاتھ آھستگی سے حرکت کرنے لگا ، سونیا ایسے تھی جیسے اسے سانپ سونگھ گیا ہو ، اس کی طرف سے کسی قسم کی کوئی حرکت نہیں تھی کوئی روک نہیں تھی لیکن چہرے پہ اقرار کا بھی کوئی شائبہ تک نہیں تھا ایسے لگتا تھا جیسے اسے سمجھ نہیں آ رہی تھی کہ وہ کس قسم کا ردعمل ظاہر کرے
 
 

 گھر سے وہ خودکشی کرنے نکلی تھی اور پھر پولیس کی گاڑی میں پولیس والا اپنی حد سے بڑھ رہا تھا لیکن دماغ پہ بےحسی چھائی ہوئی تھی لیکن اس کی بے حسی اسوقت ختم ہو گئی جب نعیم کا ہاتھ اھستگی سے اس کی رانوں کے درمیان اس کے سوراخ کی طرف بڑھا اور اس کے سوراخ کے دیواروں کو  نعیم کی انگلیوں نے چھوا تو اس کے جسم کو ایک جھٹکا لگا اور کرنٹ کی ایک لہر اس کے پورے جسم میں دوڑ گئی اور سونیا نے بے اختیار نعیم کا ہاتھ پرے دھکیل دیا سونیا ہوش کی دنیا میں واپس آ چکی تھی -‏


نعیم نے اس کی طرف سے مزاحمت محسوس کرتے ہوئے اپنا ہاتھ اس کی رانوں کی طرف دوبارہ نہ بڑھایا -
نعیم پہلے اسے باتوں سے رام کرنا چاہتا تھا          اسے پتا تھا کہ یہ ابھی جذباتی ھے اور خودکشی کرنے آئی تھی  ایسے میں کوئی مسلئہ ہی کھڑا نہ کر دے اور اسے نوکری سے ہاتھ دھونے پڑ جائیں -
نعیم نے صدیوں پرانا عورتوں کے لئے بنا ہتھیار استمال کرنے کا فیصلہ کیا جس سے عورت عام طور پر چت ہو جاتی ھے جی ہاں آپ صحیح سمجھے اس ہتھیار کا نام ھے تعریف -
سونیا تم بہت حسین ہو ، تمہارا حسن ہی ایسا ھے کہ زاہد  بھی گناہ پر آمادہ ہو جائے ، سوری sorry  میں بہک گیا تھا نعیم نے سونیا پر تعریف کا جال پھینکتے ہوئے کہا -
سونیا بالکل خاموش رہی اس نے کوئی جواب نہیں دیا -
نعیم نے لاگ بک سے پنسل اور ورک لیا اور اس پر اپنا نمبر لکھ کر سونیا کی طرف بڑھایا ، یہ کہتے ہوئے کہ کسی قسم کا کوئی مسلئہ ہو تو تم اس نمبر پر رابطہ کر لینا میں آپ کی ہر طرح کی مدد کروں گا          سونیا تم بہت پیاری ہو ، وہ زندگی جسے تم ختم کرنے جا رہی تھیں اسے میرے نام کر دو
سونیا نے کوئی جواب نہیں دیا وہ خاموش بیٹھی رہی ، سونیا نے نعیم کے موبائل نمبر والا  کاغذ ہاتھ میں پکڑا ہوا تھا ، نعیم نے سوچا سونیا  سے پولیس سٹیشن میں کوئی اس کاغذ کے بارے میں ہی نہ پوچھ لے اور اس کا نمبر دیکھ کر اس کے ساتھی اس کا مذاق ہی نہ اڑائیں - نعیم نے اس کے ہاتھ سے وہ کاغذ لے لیا - سونیا نے اس پر بھی کوئی ری ایکشن نہیں دیا اس دفعہ بھی  خاموش تھی -
نعیم نے اسے اپنا نمبر زبانی بتایااور دو تین دفعہ دوہرایا ، اس دوران پولیس اسٹیشن آ گیا اور نعیم سونیا کو لے کر انچارج کے کمرے میں چلا گیا -
 انچارج ایک ادھیڑ عمر آدمی تھا اور شوگر کا مریض تھا اسلئے وہ عورتوں کو شہوت بھری نظروں سے دیکھنے کے قابل نہیں رہا تھا اس نے سونیا کو سرسری نظروں سے دیکھا اور نعیم سے پوچھا کہ یہ کون ھے ؟
یہ خودکشی کرنے لگی تھی اور بس چند لمحے  دیر ہو جاتی تو اس وقت یہ آپ کے سامنے کھڑی نہ ہوتی باجوہ صاحب نعیم نے انچارج کو بتایا - یہ نہر والے پل پر سے کودنے لگی تھی کہ ایک آدمی نے پیچھے سے پکڑ لیا اور میرے حوالے کر دیا میں اسے آپ کے پاس لے آیا ھوں
 
 باقی کی قانونی کاروائی آپ کی بوریت کا سبب بن سکتی ھے اسلئے حذف کر رہا ھوں لیکن ایک دلچسپ بات آپ کو بتاتا چلوں کہ خودکشی واحد جرم ھے جس کی تکمیل پر مجرم کو سزا نہیں دی جا سکتی کیونکہ کہ سزا زندہ افراد کے لئے ھے -
لڑکی کا معاملہ تھا اسلئے اس کے خلاف کسی قسم کی کاروائی نہیں کی گئی اور اسے اس کے والدین کے حوالے کر دیا گیا -     
ایک دو دن تک سونیا نعیم کے حواس پر چھائی رہی اور پھر ایک نائکہ کے پاس نئی آئی لڑکی کے ساتھ رات گزارنے کے بعد سونیا نعیم کے ذہن سے نکل گئی -
اس واقعہ کے تقریبا دس سے پندرہ دن بعد رات دو بجے کے قریب نعیم کے موبائل پر ایک انجان نمبر سے کال آئی ، آواز لڑکی کی تھی  -
آپ کون ؟ لڑکی نے نعیم سے پوچھا
سونیا کی اپنی امی سے کسی بات پر تکرار ہوئی تھی اس کی امی نے سونیا کو گاؤں کی جاہل عورتوں کی طرح گالیاں دینا شروع کر دی  ایک گالی نے سونیا کو جذباتی کر دیا  کیونکہ اس کے دل میں چور تھا وہ اپنے کزن سے چدوا چکی تھی جب اس کی ماں نے اسے گشتی کہا تو نہ جانے کیوں سونیا کے دل پہ یہ گالی تازیانے کی طرح لگی اور وہ جذباتی ہو کر مرنے کے لئے گھر سے نکل آئی ماں نے سمجھا پاس پڑوس کے کسی گھر میں گئی ھے - سونیا نے نہر میں ڈوب کر مرنے کا سوچا اور نہر پہ چلی گئی اس کی زندگی ابھی باقی تھی عین اسوقت جب وہ چھلانگ لگانے کے لئے پل کی دیوار پر چڑھی تو اسے کسی نے پکڑ لیا اور وہ چاہنے کے باوجود بھی مر نہ سکی - لوگوں نے اسے پولیس کے حوالے کر دیا -  گاڑی میں پولیس والے نے پہلے اپنے لن کو ہاتھ میں لے کر مسلا تھا سونیا نے کن آنکھیوں سے اس کی ساری کاروائی دیکھی تھی اس کا موٹا لمبا لن پینٹ میں پھڑپھڑا رہا تھا اور اپنے ہونے کا احساس دلا رہا تھا سونیا اس وقت گبھرائی ہوئی تھی وہ پولیس کی حراست میں تھی اور جو لڑکی ایک دفعہ تھانے کا چکر لگا لے تو اسے معاشرہ اچھی نگاہ سے نہیں دیکھتا

وہ بہت پریشان تھی کیونکہ اب بدنامی اس کے ماتھے کا ٹیکہ بننے والی تھی وہ اسی سوچ میں گم تھی کہ اسے اپنی رانوں پر پولیس والے کے ہاتھ کا لمس محسوس ہوا ، پریشانی نے اس کے ہوش اڑائے ہوئے تھے اس سمجھ ہی نہیں آئی کہ وہ کیا کرے
اس دوران پولیس والے کا ہاتھ اس کی چوت کے دانے سے ٹکرایا تو اس کے جسم نے ایک جھرجھری لی اور اس نے اس کا ہاتھ بے اختیار جھٹک دیا لیکن چوت کے دانے پر پولیس والے کے ہاتھ نے اس کے اندر کی عورت کو جگا دیا تھا وہ ساری پریشانی بھول چکی تھی اور دوبارہ سے پولیس والے کی طرف سے جسمانی چھیڑ چھاڑ کی منتظر تھی لیکن اس نے دوبارہ ایسی کوئی حرکت نہ کی اور باقاعدہ اس سے معذرت کی ، جب اس نے سونیا کے حسن کی تعریف کی تو سونیا کی چوت میں کچھ کچھ ہونا شروع ہو گیا تھا لیکن بات تعریف سے آگے نہیں بڑھی ، جب پولیس والے نے اسے نمبر والی پرچی دی تو سونیا خاموش رہی اور واپس لینے پر دل میں حیران بھی ہوئی تھی لیکن جب پولیس والے نے اپنا نمبر زبانی دہرایا تو اس کے ذہن میں یہ نمبر فکس ہو گیا تھا - اس وقت اس نے یہ نہیں سوچا تھا کہ اس کا کسی قسم کا پولیس والے سے تعلق بنے گا
تھانے سے جب اس کے ابو اسے گھر لائے تو گھر والوں نے بہت لعنت ملامت کی اور سونیا نے گھر والوں سے ایسے دوبارہ نہ کرنے کا وعدہ کر لیا -
اسی رات سونیا سوئی تو خواب میں اس پولیس والے کو دیکھا - سونیا اور وہ سیکس کر رہے تھے اس کا موٹا تازہ لن جب اس کی چوت میں ایک جھٹکے سے داخل ہوا تو ایک چیخ سونیا کے منہ سے نکلی اور اس کی آنکھ کھل گئی سونیا کی چوت گیلی ہو چکی تھی    اس کی ماں نے پوچھا کیا ہوا سونیا ؟
خواب میں ڈر گئی تھی سونیا نے اپنی امی سے کہا  - کمرے کی لائٹ آن on تھی اور سونیا اپنے بستر میں تھی، کوئی مشکوک بات نہ تھی   اسلئے اس کی ماں نے کہا بیٹی کچھ پڑھ کر سویا کرو ، یہ کہہ کر اس کی ماں نے دوسری طرف کروٹ لے لی -
لیکن سونیا کی نیند اڑ چکی تھی ، یہ نہیں تھا کہ سونیا نے پہلے کبھی سیکس نہیں کیا تھا، سونیا پہلے اپنے کزن کے ساتھ سیکس کر چکی تھی ،
ہوا کچھ یوں تھا کہ ایک دن سونیا کا کزن ان کے گھر آیا گھر میں کوئی نہیں تھا سوائے سونیا کے - سونیا کے کزن نے اس دن سونیا سے زومعنی مذاق کئے تھے لیکن عملی طور پر کوئی حرکت نہیں کی تھی ، سونیا جوان تھی تنہائی میں جب اس کا کزن آیا
تو اس کا ذہن پراگندہ ہو گیا تھا اور وہ سیکس پر بھی آمادہ تھی لیکن کزن کی بدقسمتی کہ وہ نہ سمجھ سکا اور اس کے جانے کے بعد تھوڑی ہں دیر بعد اس کا دوسرا کزن آ دھمکا تھا اس نے تنہائی اور موقع کا فائدہ اٹھاتے ہوئے سونیا کے ممے پیچھے سے آ کر پکڑ لئے جب وہ کچن میں اس کے لئے چائے بنا رہی تھی   سونیا نے معمولی سی مزاحمت کی اور پھر اس کی بانہوں میں سما گئی ، وہ سونیا کو کمرے میں لے گیا وہاں  اس نے سونیا کے مموں کو اتنا چوسا تھا کہ  اگلے دن تک بھی لالگی نہیں گئی تھی        پھر جب اس نے سونیا کی شلوار اتار کر اس کی چوت پہ اپنا لن رکھا تھا تو سونیا کے جسم میں مزے کی لہریں گردش کرنا شروع ہو گئی تھیں اور مزے کی یہ لہریں اس وقت تھم گئیں جب سونیا کے کزن نے اس کی چوت کے سوراخ کو ایک جھٹکے سے کھول دیا  اور اس کے کنوارے پن کی جھلی کو بیدردی سے  پھاڑ دیا جس سے سونیا کو ایسے لگا تھا جیسے اس کی پھدی میں کسی نے کوئی تیر چھوڑ دیا تھا بے اختیار اس کے منہ سے ایک چیخ نکلی تھی اور پھدی سے خون

تیز جھٹکوں سے سونیا کی بیدردی سے چدائی کی تھی جس میں مزا بالکل بھی نہیں اور صرف درد ہی درد تھا ، اس چدائی کے بعد سونیا نے سیکس سے توبہ کر لی تھی اور دوبارہ اپنے اس کزن کو موقع نہیں دیا تھا -
 پولیس والے نے دو سالوں کے بعد دوبارہ سے اسے کے جسم کی  آگ پر تیل پھینک دیا تھا اور وہ دوبارہ سے سیکس کے لئے آمادہ ہو گئی تھی ، اس کے پاس پولیس والے کا نمبر تھا لیکن بات کرنے کی ہمت نہیں ہو رہی تھی لیکن پھر ایک رات اس نے پولیس والے کا نمبر ڈائل کر ہی دیا ،  پولیس والے سے سونیا نے پوچھا آپ کون ؟
نعیم لڑکی کی آواز وہ بھی رات میں سن کر حیران رہ گیا ، اس نے کہا
 میں نعیم ھوں  -
آپ ؟
سونیا نے کہا میں بتاتی ھوں پہلے آپ بتاؤ آپ جاب کیا کرتے ہیں ؟
میں پولیس میں ہوتا ھوں -
میں سونیا جس کو آپ نہر والے پل سے پولیس سٹیشن لے کر گئے تھے -
اچھا وہی خودکشی والی ؟
جی میں وہی ھوں ؟ سونیا نے کہا -
نعیم آپ کیسی ہیں ، آپ تو جا کر بھول ہی گئیں ؟
اگر بھولی ہوتی تو کال کیسے کرتی آپ کو ؟ آپ سنائیں پولیس والے کیسے ہیں آپ ؟
میں ٹھیک ھوں آپ سناؤ ؟
میں بھی ٹھیک ھوں ، ویسے آپ بہت شرارتی ہیں پولیس والے ، سونیا نے کہا  -
  اسطرح نعیم اور سونیا میں دوستی ہو گئی ، یہ دوستی بے تکلفی میں بدل گئی اور پھر نعیم نے سونیا سے پوچھا ،
جان و نعیم آپ کا نمبر کیا ھے ؟
سونیا ہنستے ہوئے جوتے کا ؟
نعیم نے بھی ایک قہقہ لگایا اور کہا نہیں جی آپ کی نرم و گداذ چھاتی کا -
سونیا : آپ نے کب اس کا گداذ دیکھا ؟
 
 
 
 
دیکھنے والے قیامت کی نظر رکھتے ہیں اور دور سے ہی پہچان لیتے ہیں آپ تو بالکل میرے ساتھ بیٹھیں تھیں گاڑی میں اور دوپٹہ بھی ہٹا ہوا تھا ، سچ پوچھو تو اس دن آپ کی چھاتی دیکھ کر ہی میرے بدن میں گرمی چڑھ آئی تھی نعیم نے کہا -
سونیا نے کہا جی مجھے پتا ھے آپ بہت بدتمیز ہو ،  ویسے آپ کی نوکری بہت مزے کی ھے -
جی ہاں بہت مزے کی ھے - بیس ہزار تنخواہ ھے گھر کا ماہانہ خرچ بچوں کی فیس،  بجلی گیس کا بل بھی ان بیس ہزار میں ، بیوی بچے بیمار ہو جائیں تو ان بیس ہزار میں سے ہی علاج کروانا پڑتا ھے ، والدین میں سے کوئی بیمار ہو تو بھی ان بیس ہزار میں علاج کروانا پڑتا ھے
حکومت نے کوئی سہولت نہیں دی ایک تنخواہ کے علاوہ اور تنخواہ بھی اتنی زیادہ کہ دس دن نہیں چلتی ،  مزے کی بات  یہ ھے کہ بنک والے بھی پولیس کو لون loan نہیں دیتے بہت سارے پولیس والوں کے گھر والے اس لئے مر جاتے ہیں کہ ان کے پاس علاج کے لئے پیسے نہیں ہوتے اور حکومت کی طرف سے ایسی کوئی سہولت بھی نہیں ھے کہ اپنا یا گھر والوں کا علاج کروا سکیں ، نعیم کی تقریر ابھی جاری ہی تھی کہ درمیان میں سونیا بول پڑی
پولیس والے تم تو سرئیس ہی ہو گئے میں نے تو ایسے ہی بات کی تھی
میں بھی آپ کو ایسے ہی بتا رہا ھوں تاکہ تمہیں پتا چل سکے کہ ہم کتنے مزے میں ہیں
نعیم نے سونیا سے کہا اور بات کو آگے بڑھاتے ہوئے : بس سونیا مجبوری میں نوکری کر رہے ہیں ورنہ کوئی حال نہیں پولیس والوں کا ، ہم سے تو ریڑھی والے اچھے ہیں جو اپنی مرضی تو کر سکتے ہیں ہم عید والے دن بھی ڈیوٹی پہ ہوتے ہیں گھر والوں کے ساتھ عید بھی نہیں منا سکتے  ،
پولیس والے اب بس بھی کرو سونیا نے اکتائے ہوئے لہجے میں کہا ،
نعیم ذرا پھر سے کہنا 
کیا ؟ سونیا نے پوچھا -
پولیس والے
آپ کے منہ سے بہت اچھا لگتا ھے ایک دم سٹائلس نعیم نے کہا ،
پولیس والے ،
پولیس والے ،
پولیس والے ،
پولیس والے ،
پولیس والے ، سونیا نے ایک ہی سانس میں چار پانچ دفعہ بول دیا -
نعیم ایسے نہیں ، تو پھر کیسے سونیا نے کہا ؟ نعیم چھوڑو ان باتوں کو - میں نے تم سے تمہارا نمبر پوچھا تھا ؟
 چھتیس کا برا پہنتی ھوں سونیا نے کہا،
وڈے وڈے ممے پتا نہیں کب ہاتھ میں آئیں گے ؟ نعیم نے اسکی چدائی کے عزائم ظاہر کرتے ہوئے کہا
 

سونیا اور نعیم بے تکلفی  سے آگے نکل چکے تھے اور ایک دوسرے کے ساتھ سیکس کرنا چاہتے تھے اسلئے وہ دونوں بہت بولڈ ہو چکے تھے  - سیکس جذبات کا اظہار  فون پر اور سیکس کی خواہش پوری کرنے کے ایکدوسرے سے ملنے کے لئے انہیں بے چین کیے ہوئے تھی نعیم نے اس کے ممے پکڑنے کی خواہش کا اظہار سونیا سے اسلئے کیا تھا  تاکہ واضح ہو سکے کہ سونیا کی چوت سے لطف اٹھانے کے لئے اسے کتنا انتظار کرنا پڑے گا -   
 میرے ممے تمہارے ہاتھ میں کیوں پولیس والے ؟ سونیا نے مسکراتے ہوئے کہا -
سونیا ہاتھوں میں نہیں تو پھر منہ میں سہی ، اب تو کوئی اعتراض نہیں ؟ نعیم نے بے تکا سا جواب دیا -
سونیا نے سنجیدہ ہوتے ہوئے کہا پولیس والے بہت جلد میں تم سے ملنے آؤں گی ،
ایسے ہی باتوں سے نعیم اور سونیا کا وقت گزرتا رہا اور پھر ایک دن سونیا نے نعیم سے کہا ،
میں کل بازار آ رہی ھوں اپنی سہیلی کے ساتھ ، اس نے بھی اپنے یار سے ملنا ھے ، ہم کل صبح دس بجے گھر سے نکلیں گی اور رکشہ سے  صدر چوک اتریں گی ، تم سوا دس بجے صدر چوک میرا انتظار کرنا -
 نعیم نے اسے دس بجے صدر چوک ملنے کا وعدہ کیا
نعیم کے دل میں لڈو پھوٹ رہے تھے سونیا نے بالاخر ملنے کا ٹائم دے دیا تھا ، نعیم نے اپنے دوست کو فون کیا کہ یار مجھے کل اپنے فلیٹ کی چابی دیتے جانا - فراز نعیم کا دوست تھا جو ایک کچی آبادی میں کرائے کے کمرے میں رہتا تھا اور بس کنڈکٹر تھا وہ صبح چھ بجے نکلتا تھا اور شام آٹھ بجے واپس آتا تھا ، نعیم کی اس سے دوستی ایک ایکسیڈنٹ کے دوران ہوئی تھی جب فراز کی بس سے ایک موٹر سائیکل سوار ٹکرا کر زخمی ہوا تھا اور بات پولیس تک پہنچ گئی تھی - وہاں نعیم کو پتا چلا کہ فراز اکیلا رہتا ھے  نعیم خود ایک رنگین مزاج اور عیاش انسان تھا اسلئے اس نے بس والوں کی فیور کی اور اسطرح فراز سے دوستی کر لی  ، بعد میں کافی دفعہ نعیم نے اس کے فلیٹ میں رنگ رلیاں منائی تھیں اور سونیا کی چدائی  بھی فراز کے فلیٹ میں کرنے والا تھا      رات سونیا اور نعیم کی باتیں صبح کی ملاقات سے  متعلق رہیں ، سونیا تھوڑا بہت ڈر رہی تھی جبکہ نعیم اس کا ڈر ختم کرنے کی کوشش کر رہا تھا ،
یہ لن پھدی کا کھیل ایسا ھے جس میں بہت زیادہ رسک ہوتا ھے لیکن کوئی پروا نہیں کرتا ، یہ لڑکی کی قسمت ہے کہ اس کے ساتھ دھوکہ نہ ہو ورنہ تو لڑکی ملنے ایک سے جاتی ھے اور آگے

چار لڑکے ہاتھ میں لن لئے تیار بیٹھے ہوتے ہیں اور پھر کئی دن چوت کی ٹکور کرتی رہتی ھے ، کبھی ایسا ہوتا ھے کہ چدائی کے دوران اوپر سے کوئی آ گیا اور لڑکی بدنام - آج تک کسی کو اس بات کی سمجھ نہیں آئی کہ ایک لڑکی دن کو کاکروچ سے ڈر جاتی ھے لیکن رات میں اکیلی دو میل پیدل لڑکے سے ملنے چلی جاتی ھے ، یہ پھدی عورت کا ڈر کیسے ختم کر دیتی ھے ؟
اگلے دن دس بجے سے پہلے ہی نعیم صدر چوک پہنچ گیا ، تھوڑی دیر بعد سونیا اپنی سہیلی کے ساتھ رکشہ سے اتری تو نعیم اس کی طرف چل دیا ، سونیا نے نیلے رنگ کی شلوار قمیض پہنی ہوئی تھی اور بہت تازہ دم لگ رہی تھی ، نعیم نے سونیا کو ساتھ لیا اور بائیک پر پیچھے بٹھا کر چل پڑا - سونیا پولیس والے کیا حال چال ہیں ؟
نعیم نے کہا میں بالکل ٹھیک ٹھاک ھوں تم سناؤ ؟
پولیس والے میں بھی ٹپ ٹاپ ھوں ، تم کب پہنچے صدر چوک ؟ سونیا نے پوچھا -
نعیم دس بجے سے چند منٹ پہلے -
واہ ! کیا بات ھے پولیس وقت سے پہلے پہنچ گئی یہ تو معجزہ ہو گیا ورنہ تو پولیس تو ہمیشہ لیٹ پہنچتی ھے  سونیا نے ہنستے ہوئے کہا- 
پولیس وقت پہ پہنچ جائے تو مصیبت اگر لیٹ پہنچے تو بھی مصیبت نعیم نے کہا -
سونیا  وہ کیسے ؟
اگر کسی ڈاکو کو مار دیں بیشک وہ اشتہاری ہو تو عدالت نے یہ نہیں دیکھنا کہ اس پر پہلے سے پچاس پرچے تھے اس نے پولیس سے یہی کہنا ھے کہ  ڈاکو نے فائرنگ کی تو کوئی پولیس والا نہیں مرا اور پولیس کی فائرنگ سے ڈاکو مر گیا  یہ جعلی مقابلہ ھے -  پھر انکوائریاں بھگتو اور عدالت میں خجل علیحدہ سے اور بہت کم افسر ساتھ دیتے ہیں -
اگر پولیس والا مر گیا تو اس کے بیوی بچے رل جاتے ہیں محکمہ دوبارہ اس کے گھر والوں کو پوچھتا تک نہیں ، اس سے بہتر ھے کہ بندہ لیٹ پہنچے ، ڈاکو کبھی نہ کبھی ہاتھ لگ ہی جانے ہیں لیکن یہ زندگی نہیں - نعیم کی تقریر ابھی جاری ہی تھی کہ سونیا نے اپنی چھاتیاں نعیم کے جسم سے لگاتے ہوئے کہا پولیس والے ایک تو تم سٹارٹ ہو جاؤ تو رکنے کا نام نہیں لیتے اب یہ فضول گفتگو ختم کرو کوئی اور بات کرو  -
سونیا کے نرم و گداذ چھاتیاں جیسے ہی نعیم کے جسم سے ٹکرائیں تو اس کے جسم میں لذت آمیز لہریں حرکت کرنے لگیں اور وہ لیکچر بھول گیا
نعیم نے اپنا جسم پیچھے کر کے اس کی چھاتیاں دبائیں تو سونیا اس سے مزید چپک گئی ، ایسے ہی ایکدوسرے کو اپنے جسموں کا احساس دلاتے ہوئے وہ فراز کے کمرے میں پہنچ گئے -
کمرے میں ایک سنگل بیڈ  ، ایک پرانا سا صوفہ سیٹ  اور کچھ گھریلو استمال کی چیزیں تھیں -
سونیا صوفہ پر بیٹھ گئی اور نعیم نے اندر سے کمرے کی چٹخنی لگا دی ، چٹخنی لگاتے ہوئے نعیم کے ہاتھ اندرونی جوش سے ہلکے ہلکے کانپ رہے تھے ، چٹخنی لگانے کے بعد نعیم بھی صوفہ پر سونیا کے ساتھ بیٹھ گیا - آنے والے لمحات کا سوچ کر سونیا کا جسم  بھی ہولے ہولے کانپ رہا تھا - نعیم سونیا کے قریب ہوتے ہوئے سونیا سے رومانٹک لہجے میں کیسی ہو میری جان ؟
سونیا جذبات کی شدت سے لرزتی آواز میں
 "میں ٹھیک ھوں "-

نعیم نے اپنا ایک ہاتھ اس کی ران پر رکھتے ہوئے سونیا سے کہا " آج تم سے میری ملاقات والا سپنا پورا ہو رہا ھے (اس دوران اس کی ران پر آہستہ آہستہ انگلیاں پھیرنا شروع کر دیں) مجھے یقین نہیں آ رہا کہ تم میرے ساتھ ہو ، آج کا دن میری زندگی کا حسین ترین دن ھے کہ دنیا کی خوبصورت لڑکی مجھ سے ملنے آئی ھے ،
"آئی لو یو سونیا "
    نعیم نے یہ کہتے ہوئے سونیا کو سر کے پیچھے گردن پر ہاتھ ڈالتے ہوئے  اسے اپنی طرف کھینچ لیا اور اس کے ہونٹوں سے اپنے ہونٹ ملا دئیے ، نعیم نے سونیا کے ہونٹوں کو آہستہ آہستہ چومنا شروع کر دیا اس کا اوپر والا ہونٹ اپنے ہونٹوں میں لے کر چوسنے لگا ، نعیم نے اپنی زبان سونیا کے منہ میں کرنے کی کوشش کی تو سونیا نے اپنے دانت جوڑ لئے اور منہ بند کر لیا ، سونیا کو شاید لپس کسنگ پسند نہیں تھی نعیم نے سونیا کے رویہ سے اندازہ لگا لیا اسلئے اس نے سونیا کے ہونٹوں سے اپنے ہونٹ علیحدہ کر لئے اور اسے اپنے بازؤں میں اٹھا کر بیڈ پر لے آیا -
بیڈ پر سونیا کو لٹا کر خود اس کے اوپر لیٹ گیا ، سونیا کی چھاتیاں نعیم کے سینے میں دب گئیں اور نعیم سونیا کے چہرے کو چومنے لگا ، نعیم نے اس کی گالوں پر زبان کی نوک پھیرنی شروع کر دی جس سے سونیا کے جسم میں سرور پیدا ہونا شروع ہو گیا اور اس نے اپنا ہاتھ نعیم کے بالوں میں پھیرنا شروع کر دیا ، نعیم نے جب سونیا کی گردن پر اپنے ہونٹ لگائے اور اس کی گرم سانسیں سونیا نے اپنی گردن پر محسوس کیں تو سونیا کو ایسے لگا جیسے مزا اس کی رگ رگ میں سرایت کر گیا ھے نشے کی طرح
اور جب نعیم نے اس کے کان کی لو کو ہونٹوں میں لیا اور دانتوں سے ھلکے سے دبایا تو اب کی بار سونیا یہ برداشت نہ کر سکی اور بالوں کو کھینچ کر اسے اپنی گردن اور کان سے دور کرنے کی کوشش کی لیکن نعیم بھی پرانا پاپی تھا اور جان گیا تھا کہ سونیا سے اب مزا برداشت نہیں ہو رہا اور بہت زیادہ لطف محسوس کر رہی ھے تو اس نے سونیا کا ہاتھ بالوں سے نکالا اور اپنے دونوں ہاتھوں کی انگلیاں اس کی انگلیوں میں پھنسا کر اس کے دونوں ہاتھوں کو  جکڑ لیا اور پھر سے اس کی گردن اور کانوں چومنے لگا اور ان پر زبان پھیرنے لگا ، اب کی بار سونیا کی سانسیں تیز اور بھاری ہو گئیں اور ایسے لگ رہا تھا جیسے اس کا سانس پھول گیا ہو ، سونیا کے منہ سے مزے سے بھرپور ھلکی ھلکی کراہیں نکلنا شروع ہو گئیں اور نعیم اور جوش سے سونیا کی گردن کو چومنے لگا ، نعیم کا چھ سات انچ کا لمبا اور موٹا لن مکمل تناؤ کی حالت میں آ چکا تھا اور سونیا کی رانوں پر چب رہا تھا ، سونیا نعیم کا تگڑا لن اپنی پھدی کے اردگرد محسوس کر رہی تھی جس کی چبن  سے اس کی چوت مزید گیلی ہو رہی تھی

نعیم سونیا کی گردن سے نیچے چوما چاٹی کرتے ہوئے آیا تو سونیا کے جسم پر ابھی بھی قمیض تھی اس نے سونیا کی قمیض اتارنے کا سوچا لیکن پھر کچھ سوچ کر رک گیا ، اس نے سونیا کے گریبان میں ہاتھ ڈال کر اس کی برا میں سے اس کی لیفٹ چھاتی باہر نکال لی ، اور اس کی براؤن نپل پر زبان کو ٹچ کرنے لگا جس پر سونیا مزے سے تڑپ اٹھی ، نعیم نے اس کی نپل ہونٹوں میں لے کر چوسنے لگا جس سونیا کے منہ سے آہ ، آہ ، او ، اں جیسی جنسی آوازیں خودبخود نکلنا شروع ہو گئیں اور سونیا نعیم کا سر اپنی چھاتی کی طرف دبانے لگی ، سونیا اس وقت مزے کی دنیا کی سیر کر رہی تھی ، نعیم کا لن تو کافی دیر سے کھڑا ہو چکا تھا اب اس سے مزید برداشت نہیں ہو پا رہا تھا اسلئے اس نے سونیا کی چدائی کرنے کا فیصلہ کر لیا ، نعیم نے اس کی چھاتی چوسنے کے بعد اس کی شلوار کھینچی اور اسکی شلوار گھٹنوں تک نیچے آگئی
نعیم نے سونیا کی شلوار کھینچی تو وہ گھٹنوں تک اتر گئی ، نعیم نے اس کی قمیض اس کی رانوں سے اٹھائی تو نیچے سونیا کی پھولی ہوئی چوت پر نعیم کی نظر پڑی جس کے لب آپس میں ملے ہوئے تھے  تو نعیم کا لن ایک جھٹکا کھا کر مزید تناؤ میں آ گیا اور سونیا کی چوت کو سلامی دینے کی لئے تیار تھا ، نعیم نے تازہ شیوڈ چوت دیکھی تو اس کے منہ میں پانی آگیا اور اس نے اپنے لب سونیا کی چوت کے لبوں سے ملا دئیے اور اسکی چکنی چوت میں زبان ڈال دی ، سونیا ایک دم تڑپ اٹھی اور لطف و سرور کی بلندیوں پر پہنچ گئی ، نعیم نے اس کی گیلی چوت کا ذائقہ محسوس کیا اور اس کی چوت کے اندر زبان کرنا شروع کر دی ، نعیم کبھی تو اس کی چوت پر زبان پھیرتا اور کبھی زبان اندر کرتا جس سے سونیا کے منہ سے مزے سے بھرپور جنسی آوازیں نکلنا شروع ہو گئی - نعیم چھپر چھپر اس کی چوت چاٹ رہا تھا اور سونیا مزے سے بھرپور آوازیں نکال رہی تھیں ، چند منٹ بھی نہیں گزرے تھے کہ سونیا کی آواز میں تیزی اور جسم میں اکڑاہت آ گئی ، نعیم کو اندازہ ہو گیا کہ سونیا اب فارغ ہونے والی ھے
و اس نے سونیا کی چوت کے دانے کو دانتوں میں لے کر آہستہ سے کاٹا اور ایک دم زبان سونیا کی چوت میں ڈال دی سونیا کے منہ سے ایک تیز چیخ  نکلی اور پھدی سے پانی - نعیم نے اپنا چہرہ پیچھے کر لیا - سونیا آنکھیں بند کئے لیٹی مزے میں تھی ، نعیم اپنے کھڑے لن کے ساتھ کھڑا ہو گیا اور وہاں پڑے ہوئے ایک کپڑے سے اپنا منہ صاف کیا اور سونیا کے پاس بیڈ پر بیٹھ گیا -
سونیا بہت خوش لگ رہی تھی یہ اس کی زندگی کا پہلا خوشگوار سیکسی تجربہ تھا -
تھوڑی دیر بعد نعیم نے اس کی چھاتی پر ہاتھ رکھا اور اس کی نپل پر انگلی گھمانے لگا ساتھ ہی اس کی چھاتی کو مٹھی میں لے کر دبانے لگا سونیا مدہوش ہونے لگی نعیم نے سونیا کی قمیض اتار دی ، سونیا کا برا اس کی چوچیوں سے نیچے تھا اور اس کی چوچیاں تنی ہوئی تھیں اور براؤن رنگ تھا ان کا - نعیم نے سونیا سے مزید تھوڑی جنسی چھیڑ چھاڑ  کی اور جب دیکھا کہ سونیا کی چوت گیلی ہو چکی ھے اور وہ خود بھی چدنے کے لئے تیار ھے تو نعیم نے خود کو بھی کپڑوں سے آزاد کیا اور سونیا کی ٹانگوں کے درمیان آ کر اس پر لیٹ گیا - سونیا کی چوت کو سلامی دینے کے لئے نعیم کا جاندار لن  تیار تھا
نعیم نے سونیا کی ٹانگوں میں ہاتھ ڈال کر انہیں اوپر کیا اور اپنا لن سونیا کی پھدی کے لبوں کے درمیان اس کے سوراخ پر ایڈجسٹ کیا - سونیا آنے والے لمحات سے ڈری ہوئی تھی اس کے ذہن میں پہلا تجربہ تھا جو انتہائی تکلیف دہ تھا - نعیم نے لن اس کی پھدی پر ایڈجسٹ کرنے کے بعد سونیا سے کہا ، سونیا اندر جانے پر تمہیں درد ہو گا لیکن تم  اگر تھوڑی دیر یہ برداشت کر گئیں تو پھر مزا ہی مزا ہو گا-
سونیا نے اثبات میں سر ہلایا تو نعیم نے ایک ہلکا سا جھٹکا دیا تو سونیا کے منہ سے ایک درد بھری کراہ نکلی - نعیم کے لن کی ٹوپی سونیا کی گیلی چوت میں داخل ہو چکی تھی نعیم نے چند لمحے رک کر تھوڑا سا جھٹکا مارا  تو اس کا آدھا لن سونیا کی چوت میں چلا گیا اور سونیا درد سے بلبلا اٹھی  - سونیا نے نعیم سے کہا پلیز اسے باہر نکالو بہت درد ہو رہی ھے - نعیم جانتا تھا کہ ایک دفعہ باہر نکال لیا تو اس نے دوبارہ سے نہیں کرنے دینا -
نعیم نے سونیا سے کہا جان ! بس یہی چند لمحات تکلیف دہ ہیں بس تھوڑا برداشت کر لو  اپنے اس پولیس والے
کی خاطر درد کے بعد مزا آئے گا  ، نعیم نے نیچے سے حرکت روک دی اور اس کے مموں کو آہستہ آہستہ دبانے لگا اور ساتھ ساتھ اس کے گالوں ، آنکھوں اور ہونٹوں پر کس کرنے لگا ، اس دوران بیچ میں وہ سونیا سے آئی لو یو ، آئی لو یو بھی سونیا کے کانوں میں کہہ رہا تھا ، نعیم کے رکنے سے سونیا کے درد میں بھی کمی آ گئی تھی اس کے چومنے سے اور کانوں میں آئی لو یو کی تکرار سے اسے پھر سے مزا آنا شروع ہو گیا تھا حالانکہ نعیم کا شاندار طاقت سے بھرپور لن ابھی بھی آدھے سے زیادہ اس کی چوت میں تھا اور اس کی حرکت سے سونیا کی گانڈ پھٹ رہی تھی مطلب اسے درد ہو رہا تھا-
 نعیم نے خاص طور پر نیچے اپنے لن پر نظر ڈالی کہ اس پر خون ھے یا نہیں ؟ وہاں خون کا ایک قطرہ بھی نہیں تھا نعیم کو پتا چل گیا کہ سونیا کی پہلے سے ہی چدائی ہو چکی ھے اور اسے سونیا کی چوت کی تنگی سے یہ بھی اندازہ ہو گیا کہ سونیا بہت زیادہ چدی  ہوئی نہیں ھے -
 نعیم نے آہستہ آہستہ اپنا لن باہر کرنا شروع کر دیا اور پھر جب ٹوپہ اس کی پھدی کے لبوں تک آیا تو نعیم نے اپنا تھوک اپنے لن پر گرایا اور پھر آہستہ آہستہ واپس چوت میں کرنا شروع کر دیا
اس دفعہ لن بہت ہی اھستگی سے سونیا کی چوت میں جا رہا تھا اور سونیا کو بہت کم درد ہو رہا تھا، آہستہ آہستہ لن سونیا کی پھدی کی گہرائیوں میں اتر رہا تھا اور بالآخر سارے کا سارا لن سونیا کی چوت میں چلا گیا، اس بار اتنا بڑا لن لینے کے باوجود بھی سونیا کے منہ سے کسی قسم کی آواز نہیں نکلی جو تھوڑا بہت درد تھا وہ برداشت کر گئی تھی - اسلئے تو کہتے ہیں کہ اگر عورت برداشت کرنے پہ آئے تو بہت کچھ برداشت کر لیتی ھے ورنہ تو چھوٹی چھوٹی بات پہ اس کی گانڈ پھٹ جاتی ھے -             نعیم نے اب دھیرے دھیرے  اندر باہر کرنا شروع کر دیا تھا ، سلو سپیڈ سے لن چوت میں اندر باہر والا سفر طے کر رہا تھا اور بتدریج اس کی سپیڈ میں اضافہ ہو رہا تھا ، سپیڈ بڑھنے سے سونیا کی چوت میں تکلیف ہونا شروع ہو گئی تھی ، اس کا بند منہ اب کھل گیا تھا اس کے منہ سے ھلکی ھلکی درد بھری کراہیں نکلنا شروع ہو گئی اور یہ کراہیں سپیڈ بڑھنے کے ساتھ ساتھ بلند ہو رہی تھیں -  ابھی تک درد ہی درد تھا مزا کا دور دور تک نام و نشان نہیں تھا - نعیم بھی سات آٹھ دن بعد کسی لڑکی کو چود رہا تھا
اور لڑکی بھی ایسی جس کی چوت بہت زیادہ ٹائیٹ تھی ،اسلئے  نعیم اپنی اصلی ٹائمنگ سے پہلے ہی ڈسچادج ہونے کے قریب پہنچنے لگا تھا  ، اس نے اپنی سپیڈ بڑھا دی - اب لن ایک دفعہ پورے کا پورا باہر آتا اور رگڑ مارتا ہوا چوت کی گہرائی میں غائب ہو جاتا ، آہ ، اں ، اف. . .  آہ . . . . آہ : .. جیسی درد بھری آوازیں سونیا کے منہ سے نکل رہی تھیں - نعیم کا لن بڑی روانی سے سونیا کی چوت کی سیر کر رہا تھا ، نعیم ایسے ہی سپیڈ سے آگے پیچھے کر رہا تھا اور اس کی منی اس کے ٹٹوں سے لن کی ٹوپی کی طرف سفر کرنا شروع ہو گئی ، اور چند سیکنڈ بعد لن کی ٹوپی سے نکل کر سونیا کی پھدی میں جا گری ، جس سے سونیا کی تکلیف میں کمی آ گئی منی سے لتھڑا ہوئے لن نے  تھوڑی دیر ہں  حرکت کی اور پھر سونیا کی چوت کی گہرائیوں کی سیر کرنے اور اسے اپنے پانی سے سیراب کرنے کے بعد باہر نکل آیا - سونیا نے فورپلے فل انجوائے کیا تھا لیکن چدائی میں اسے بالکل مزا نہیں آیا تھا یہ عمل تکلیف دہ تھا لیکن پہلی چدائی سے کم - آہستہ آہستہ یہ تکلیف بھی ختم ہو جانی ھے لیکن چدائی والا سلسلہ ختم نہیں ہونا،‏‎